Chupke Chupke Raat Din – Ghulam Ali (Longing in secret, those days and nights)

Translation:

“I remember, those days and nights.”

That longing in secret, those days and nights, I remember,
the age of love, those memories in love, yet I remember.

That boldness of mine in your presence,
your biting the nails, I remember.

My playfully pulling the curtains off – a sudden,
your concealing the face in veil, I remember.

That secret place where you used to meet me often,
has been ages since, though the place – still I remember.

In scorching heat of noon, just for sake of my calling,
your coming on the loft – naked feet, I remember.

Finding you unaccompanied some times, then in caution due,
revealing state of heart to you that casually, I remember.

In nights of meeting, for even a hint of a goodbye,
your sobbing, so much as making me cry, I remember.

Among infinite fears, among those limitless desires,
time I fell in love for first time with you, I remember.

Revealing the pain of heart with insensitiveness,
while your playing with your bangles, I remember.

To convey the farewell, at time of being apart,
your hesitation, that dryness of lips, yet I remember.

– Original lyrics by Hasrat Mohani. Performed by Ghulam Ali.

Urdu version:

چپکے چپکے رات دن آنسو بہانا یاد ہے
ہم کو اب تک عاشقی کا وہ زمانہ یاد ہے

با ہزاراں اضطراب و صد ہزاراں اشتیاق
تجھ سے وہ پہلے پہل دل کا لگانا یاد ہے

بار بار اُٹھنا اسی جانب نگاہ ِ شوق کا
اور ترا غرفے سے وُہ آنکھیں لڑانا یاد ہے

تجھ سے کچھ ملتے ہی وہ بے باک ہو جانا مرا
اور ترا دانتوں میں وہ انگلی دبانا یاد ہے

کھینچ لینا وہ مرا پردے کا کونا دفعتاً
اور دوپٹے سے ترا وہ منہ چھپانا یاد ہے

جان کرسونا تجھے وہ قصد ِ پا بوسی مرا
اور ترا ٹھکرا کے سر، وہ مسکرانا یاد ہے

تجھ کو جب تنہا کبھی پانا تو ازراہِ لحاظ
حال ِ دل باتوں ہی باتوں میں جتانا یاد ہے

جب سوا میرے تمہارا کوئی دیوانہ نہ تھا
سچ کہو کچھ تم کو بھی وہ کارخانا یاد ہے

غیر کی نظروں سے بچ کر سب کی مرضی کے خلاف
وہ ترا چوری چھپے راتوں کو آنا یاد ہے

آ گیا گر وصل کی شب بھی کہیں ذکر ِ فراق
وہ ترا رو رو کے مجھ کو بھی رُلانا یاد ہے

دوپہر کی دھوپ میں میرے بُلانے کے لیے
وہ ترا کوٹھے پہ ننگے پاؤں آنا یاد ہے

آج تک نظروں میں ہے وہ صحبتِ راز و نیاز
اپنا جانا یاد ہے،تیرا بلانا یاد ہے

میٹھی میٹھی چھیڑ کر باتیں نرالی پیار کی
ذکر دشمن کا وہ باتوں میں اڑانا یاد ہے

دیکھنا مجھ کو جو برگشتہ تو سو سو ناز سے
جب منا لینا تو پھر خود روٹھ جانا یاد ہے

چوری چوری ہم سے تم آ کر ملے تھے جس جگہ
مدتیں گزریں،پر اب تک وہ ٹھکانہ یاد ہے

شوق میں مہندی کے وہ بے دست و پا ہونا ترا
اور مِرا وہ چھیڑنا، گُدگدانا یاد ہے

با وجودِ ادعائے اتّقا حسرت مجھے
آج تک عہدِ ہوس کا وہ فسانا یاد ہے

(مولانا حسرت موہانی)

Update 10/15/2013:

Here’s my favorite performance of Ghulam Ali saheb hosted on SoundCloud:

7 thoughts on “Chupke Chupke Raat Din – Ghulam Ali (Longing in secret, those days and nights)

  1. Pingback: Hungama Hai Kyon Barpa (Why is the chaos growing?) | Serenades of a dreamer...

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s